Kuliyat e Sahir - کلیات ساحر

جانے وہ کیسے لوگ تھے جن کو پیار سے پیار ملا

ہم نے تو جب کلیاں مانگیں کانٹوں کا ہار ملا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں پل دو پل کا شاعر ہوں پل دو پل مری کہانی ہے

پل دو پل میری ہستی ہے پل دو پل مری جوانی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائیں ہم دونوں

​ نہ میں تم سے کوئی امید رکھوں دل نوازی کی​

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کبھی کبھی مرے دل میں خیال آتا ہے

کہ زندگی تری زلفوں کی نرم چھاؤں میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ابھی نہ جاؤ چھوڑ کر ۔۔۔ کہ دل ابھی بھرا نہیں

ابھی ابھی تو آئے ہو ۔۔۔ بہار بن کے چھائے ہو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Book Attributes
Pages632

Write a review

Note: HTML is not translated!
    Bad           Good

Kuliyat e Sahir - کلیات ساحر

Writer: Sahir Ludhianvi
Views: 66
Category: Urdu Poetry
Pages: 632
Product Code: STP-2162
Availability: In Stock
  • Rs.600
قتیل شفائی صاحب نے اپنی اس آپ بیتی میں، راجندرسنگھ بیدی کے بڑھاپے کے عشق (اور شادی) کو ناپسندیدہ قر..
Rs.1,000