Menu
Your Cart

Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی

Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
-18 %
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Mantiq Ul Tair - Ik Raz e Shanasai - منطق الطیر اک راز شناسائی
Rs.1,800
Rs.2,200

 

 

 

منطق الطیر " بارھویں صدی کے فارسی زبان کے عظیم صوفی شاعر فرید الدین عطار کی ایک لازوال طویل نظم ہے ۔ جسے شاعری کی اصطلاح میں مثنوی کہا جاتا ہے ۔ "منطق الطیر " ایک ایسی شاندار تمثیل ہے جس میں " خدا شناسی" کو علامتی انداز میں بیان کیا گیا ہے۔اس تمثیل میں تیس پرندے، ہد ہد کی سربراہی میں ، جسے سب سے زیادہ سمجھدار پرندہ تصور کیا جاتا ہے، ایک خیالی پرندے سیمرغ ( سیمرغ کا مطلب ہے تیس پرندے) کی تلاش میں سات وادیوں کا سفر کر تے ہیں۔ فریدالدین عطار کا خیال ہے کہ خدا کو ڈھونڈنے کے لیے انسان کو اپنے اندر دیکھنا چاہیے۔

Book Attributes
Pages 545

Write a review

Note: HTML is not translated!
Bad Good
Tags: sufism